اردو پیڈ اردو ای میل محفلِ موسیقی بات سے بات محفلِ مشاعرہ شاعری تصویری کارڈ فلیش کارڈ سرورق
نئی آمد | تازہ اضافہ | تلاش کریں

توجہ فرمائیں

شاعری  کو سننے کے لیئے آپ کے کمپیوٹر پر ریل پلیر انسٹال ہونا ضروری ہے۔ اگر آپ کے پاس یہ موجود نہیں ہے تو اسے مفت ڈاون لوڈ کرنے کے لیئے
یہاں  کلک کریں۔

موسیقی شعرا کی ترتیب سے  اضافہ
  اردو لائف پر ایک نیا سلسلہ
 

 فہرست

اُستاد مہدی حسن خان
استاد امانت علی خان
اُستاد غلام علی خان
استاد نصرت فتح علی خان
ملکہٍ پکھراج
ملکہ ترنم نورجہاں
بیگم اختر
فریدہ خانم
استاد حامد علی خان
محمد رفیع
جگجیت سنگھ
اقبال بانو
زبیدہ خانم
یادگار ملی نغمے

کیا آپ جانتے ہیں؟

محفلِ موسیقی کو بہت جلد سرچ سے منسلک کر دیا جائے گا۔
گوگل۔کوم کے تعاون سے آپ اردو میں سرچ کر سکیں گے
 

محفلِ موسیقی
اُستاد غلام علی خان

اللہ کے گھر دیر ہے اَندھیر نہیں ہے
ابر برسا ہے نہ ہوا تیز چلی ہے اب کے
میں نظر سے پی رہا ہوں
تمہارے خط میں نیا اِک سلام کس کا تھا
آوارگی
یہ کس نے کہ دیا آخر کہ چھپ چھپا کے پیو
ہنگامہ ہے کیوں برپا
چمکتے چاند کو ٹوٹا ہوا تارہ بنا ڈالا
ہم تیرے شہر میں آئے ہیں مُسافر کی طرح
ہم تمھیں ایسی پلا دیں گے تم آؤ تو سہی
ہنگامہ ہے کیوں برپا تھوڑی سی جو پی لی ہے
جب سے تُو نے مُجھے دیوانہ بنا رکھا ہے
جہاں تلک بھی یہ صحرا دیکھائی دیتا ہے
کل چودویں کی رات تھی شب بھر رہا چرچا تیرا
کھلی جو آنکھ تو وہ تھا نہ وہ زمانہ تھا
کچھ یادگارِ شہر ستم گر ہی لے چلیں
مرے شوق دا نئی ِاعتبار تینوں
زندگی سے یہی گلہ ہے مجھے
زندگی کو اُداس کر بھی گیا
گئے دنوں کا سراغ لے کر
غم ہے یا خوشی ہے تو
ایک تو چہرہ ایسا ہو
ہم کہاں اور تم کہاں جاناں
کبھی آہ لب پہ مچل گئی
کبھی کتابوں میں پھول رکھنا کبھی درختوں پہ نام لکھنا
کہاں آکے رُکنے تھے راستے ، کہاں موڑ تھا اُسے بھول جا
کچھ تو ہوا بھی سرد تھی ، کچھ تھا تیرا خیال بھی
پتہ لّگہ مینوں ہوندی کی جدائی، جدائی
رقص کرتی ہے فضا وجد میں جام آیا ہے
رک گیا آنکھ سے بہتا ہوا دریا کیسے
ساقی پہ الزام نہ آئے
ساقی شراب لا کہ طبعیت اُداس ہے
سلسلے توڈ گیا وہ سبھی جاتے جاتے
تمام عمر تیرا انتظار ہم نے کیا
تم پریشان نہ ہو ایک پل میں بکھر جاؤں گا
وقت کی عمر کیا بڑی ہوگی
وہ دے رہا ہے دلاسے تو عمر بھرکے مجھے
وہ تو خوشبو ہے ہواؤں میں بکھر جائے گا
وہی مزاج وہی چال ہے زمانے کی
یہ فاصلہ جو پڑا ہے میرے گماں میں نہ تھا
بدن میں آگ سی چہرہ گلاب جیسا ہے
 یارو مجھے معاف کرو، میں نشے میں ہوں
وہ جو ہم میں تم  قرار تھا، تمھیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو
میرا جزبِ محبت کم نہ ہوگا
مےکدے والے مجھے بھول کہاں پاتے ہیں
اب اور کیا کسی سے مراسم بڑھائیں ہم
اب کے تجدیدِوفا کا نہیں امکاں جاناں
اک پگلی میرا نام جو لے
د لوں کو توڑنے والو تمہیں کسی سے کیا
بھلا بھی دے اُسے جو بات ہو گئ پیارے
ایک نغمہ ایک تارا ایک غنچہ ایک جام
واپسی
اپنے احباب کو یہ صفحہ بھیجیں
جملہ حقوق بنام اردو لائف محفوظ ہیں۔ نجی پالیسی ہمارے بارے میں استعمال كی شرا ئیط ہمارا رابطہ